کون یاد آیا یہ مہکاریں کہاں سے آ گئیں

ظفر گورکھپوری

کون یاد آیا یہ مہکاریں کہاں سے آ گئیں

ظفر گورکھپوری

MORE BYظفر گورکھپوری

    کون یاد آیا یہ مہکاریں کہاں سے آ گئیں

    دشت میں خوشبو کی بوچھاریں کہاں سے آ گئیں

    کیسی شب ہے ایک اک کروٹ پہ کٹ جاتا ہے جسم

    میرے بستر میں یہ تلواریں کہاں سے آ گئیں

    خواب شاید پھر ہوا آنکھوں میں کوئی سنگسار

    زیر مژگاں خون کی دھاریں کہاں سے آ گئیں

    شاید اب تک مجھ میں کوئی گھونسلہ آباد ہے

    گھر میں یہ چڑیوں کی چہکاریں کہاں سے آ گئیں

    ساتھ ہے ملنا اگر چاہوں تو ملتا بھی نہیں

    ایک گھر میں اتنی دیواریں کہاں سے آ گئیں

    رکھ دیا کس نے مرے شانے پہ اپنا گرم ہاتھ

    مجھ شکستہ پا میں رفتاریں کہاں سے آ گئیں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نامعلوم

    نامعلوم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY