خاک سے اٹھنا خاک میں سونا خاک کو بندہ بھول گیا

شائستہ مفتی

خاک سے اٹھنا خاک میں سونا خاک کو بندہ بھول گیا

شائستہ مفتی

MORE BYشائستہ مفتی

    خاک سے اٹھنا خاک میں سونا خاک کو بندہ بھول گیا

    دنیا کے دستور نرالے آپ سے رشتہ بھول گیا

    جنگل جنگل جوگ میں تیرے پھرتے ہیں اک روگ لیے

    ترے ملن کی آس جگی ہے دشت کا رستہ بھول گیا

    ایک محبت راس ہے دل کو ایک وفا انمول صنم

    بھیس فقیروں والا بھر کے ذات کا صحرا بھول گیا

    خواب میں جب سے دیکھا اس کو چین نہیں ہے آنکھوں میں

    ساری رات مسلسل کاٹی خواب کا رستہ بھول گیا

    شام ڈھلے اک پہلا تارا ہم سے ملنے آیا تھا

    دور بدیس میں رہنے والا اپنا پرایا بھول گیا

    ہر دھڑکن سے پیار کا امرت ہر اک لفظ میں اترا تھا

    ساری عمر جو لکھا دل نے وہی وظیفہ بھول گیا

    مالا جپتے جپتے گزری عمر کسی سنیاسی کی

    منزل پاس جو آ پہنچی تو عشق صحیفہ بھول گیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY