Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

خاموش اندھیری راتوں میں جب ساری دنیا سوتی ہے

طالب باغپتی

خاموش اندھیری راتوں میں جب ساری دنیا سوتی ہے

طالب باغپتی

MORE BYطالب باغپتی

    دلچسپ معلومات

    (اپریل 1927ء ؁)

    خاموش اندھیری راتوں میں جب ساری دنیا سوتی ہے

    اک ہجر کا مارا روتا ہے اور شبنم آنسو دھوتی ہے

    پہلے تو محبت رفتہ رفتہ ہوش و خرد کو کھوتی ہے

    پھر یاد کسی کی آ آ کر کانٹے سے دل میں چبھوتی ہے

    کچھ سوچتا ہوں کچھ کہتا ہوں کچھ کہتے ہیں کچھ سنتا ہوں

    جب ان کے سامنے ہوتا ہوں میری یہ حالت ہوتی ہے

    چارہ گر بس یہ بتلا دے وہ جب مجھ سے چھو جاتے ہیں

    کیوں جسم میں موجیں اٹھتی ہیں کیوں نبض میں سرعت ہوتی ہے

    سب کہتے ہیں میں دیوانہ ہوں ہیں کہتا ہوں سب دیوانے ہیں

    میں دنیا بھر پر ہنستا ہوں دنیا بھر مجھ پر روتی ہے

    جب چاند افق پر ہوتا ہے اور تارے جھلمل کرتے ہیں

    آنکھوں میں کسی کی بھولی بھولی شکل سمائی ہوتی ہے

    امید سے رشتہ ٹوٹ گیا تم کیا چھوٹے دل چھوٹ گیا

    ارمانوں کی بڑھتی کھیتی کو سیل یاس ڈبوتی ہے

    دل ایک نہ اک دن جانا تھا یہ دن بھی آخر آنا تھا

    طالبؔ تم اس کا غم نہ کرو یہ چیز پرائی ہوتی ہے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے