خاموش ہیں لب اور آنکھوں سے آنسو ہیں کہ پیہم بہتے ہیں

جلال الدین اکبر

خاموش ہیں لب اور آنکھوں سے آنسو ہیں کہ پیہم بہتے ہیں

جلال الدین اکبر

MORE BYجلال الدین اکبر

    خاموش ہیں لب اور آنکھوں سے آنسو ہیں کہ پیہم بہتے ہیں

    ہم سامنے ان کے بیٹھے ہیں اور قصۂ فرقت کہتے ہیں

    اب حسن و عشق میں فرق نہیں اب دونوں کی اک حالت ہے

    میں ان کو دیکھتا رہتا ہوں وہ مجھ کو دیکھتے رہتے ہیں

    ان کی وہ حیا وہ خاموشی اپنی وہ محبت کی نظریں

    وہ سننے کو سب کچھ سنتے ہیں ہم کہنے کو سب کچھ کہتے ہیں

    اس شوق فراواں کی یا رب آخر کوئی حد بھی ہے کہ نہیں

    انکار کریں وہ یا وعدہ ہم راستہ دیکھتے رہتے ہیں

    ہمدرد نہیں ہم راز نہیں کس سے کہئے کیوں کر کہئے

    جو دل پہ گزرتی رہتی ہے جو جان پہ صدمے سہتے ہیں

    آ دیکھ کہ ظالم فرقت میں کیا حال مرا بے حال ہوا

    آہوں سے شرارے جھڑتے ہیں آنکھوں سے دریا بہتے ہیں

    اکبرؔ شاید دل کھو بیٹھے وہ جلسے وہ احباب نہیں

    تنہا خاموش سے پھرتے ہیں ہر وقت اداس سے رہتے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY