خراب حال ہوں ہر حال میں خراب رہا

فضل الرحمٰن

خراب حال ہوں ہر حال میں خراب رہا

فضل الرحمٰن

MORE BYفضل الرحمٰن

    خراب حال ہوں ہر حال میں خراب رہا

    خوشی میں بھی غم دل کا سا اضطراب رہا

    نظارۂ رخ زیبا کی یاں کسے فرصت

    نقاب رخ پہ رہی یا وہ بے نقاب رہا

    طرب کی بزم میں جا کر کرے گا کیا کوئی

    نہ وہ پیالہ نہ وہ مے نہ وہ شباب رہا

    نوائے شوق نکلتی ہے اب بھی دل سے مگر

    نہ وہ اپج نہ وہ محفل نہ وہ رباب رہا

    ہر ایک چیز کی دنیا میں حد مقرر ہے

    مگر یہ رنج زمانہ کا بے حساب رہا

    خیال و خواب مسرت کی اک توقع پر

    تمام عمر مجھے انتظار خواب رہا

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY