خراب ہوں کہ جنوں کا چلن ہی ایسا تھا

شاذ تمکنت

خراب ہوں کہ جنوں کا چلن ہی ایسا تھا

شاذ تمکنت

MORE BY شاذ تمکنت

    خراب ہوں کہ جنوں کا چلن ہی ایسا تھا

    کہ تیرا حسن مرا حسن ظن ہی ایسا تھا

    ہر ایک ڈوب گیا اپنی اپنی یادوں میں

    کہ تیرا ذکر سر انجمن ہی ایسا تھا

    بہانہ چاہیے تھا جوئے شیر و شیریں کا

    کوئی سمجھ نہ سکا تیشہ زن ہی ایسا تھا

    حد ادب سے گریزاں نہ ہو سکا کوئی

    کہ سادگی میں ترا بانکپن ہی ایسا تھا

    رفاقتوں میں بھی نکلیں رقابتیں کیا کیا

    میں کیا کہوں ترا روئے سخن ہی ایسا تھا

    جہاں بھی چھاؤں ملی دو گھڑی کو بیٹھ رہے

    دیار غیر کہاں تھا وطن ہی ایسا تھا

    تھی داغ داغ مرے قاتلوں کی خوش پوشی

    کہ عمر بھر مرے سر پر کفن ہی ایسا تھا

    مجھے تو یوں لگا ترشا ہوا تھا شعلہ کوئی

    بدن ہی ایسا تھا کچھ پیرہن ہی ایسا تھا

    حقیقتوں میں بھی تھی شاذؔ رنگ آمیزی

    قصیدۂ لب و عارض کا فن ہی ایسا تھا

    مآخذ:

    • Book: Kulliyat-e-Shaz Tamkanat (Pg. 507)
    • Author: Shaz Tamkanat
    • مطبع: Educational Publishing House (2004)
    • اشاعت: 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites