Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

خوف کا طاری سلسلہ کیا ہے

دناکشی سحر

خوف کا طاری سلسلہ کیا ہے

دناکشی سحر

MORE BYدناکشی سحر

    خوف کا طاری سلسلہ کیا ہے

    ہر سو وحشت ہے یہ ہوا کیا ہے

    روح زخمی ہماری سب کی ہے

    مل کے سوچیں کہ اب دوا کیا ہے

    قلزم خوں نہ از ازل ٹھہری

    اس ذہانت کا فائدہ کیا ہے

    ہر طرف شور ان سوالوں کا

    کون ہے تو ترا پتہ کیا ہے

    غیر کے گھر لگی تو چپ ہے تو

    رک کہ تیرا ابھی جلا کیا ہے

    کیوں بھٹکتی ہیں سڑکوں پے روحیں

    مر کے جینے کی یہ سزا کیا ہے

    اک خلش سی ہوا میں ہے شاید

    سانس مشکل سا ہو گیا کیا ہے

    تو بھی انسان میں بھی انساں ہی

    اب یہ انسانیت بتا کیا ہے

    جیتے ہو لاش پر کسی کی تم

    کل وہ جیتے گا تو برا کیا ہے

    درد تیرا مرا نہ ہو یکساں

    درد ہی ہے علاحدہ کیا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے