کھل کے باتیں کریں سنائیں سب

سلمان اختر

کھل کے باتیں کریں سنائیں سب

سلمان اختر

MORE BYسلمان اختر

    کھل کے باتیں کریں سنائیں سب

    کوئی تو ہو جسے بتائیں سب

    رات پھر کشمکش میں گزری ہے

    تھوڑا بتلا دیں یا چھپائیں سب

    کچھ تو اپنے لئے بھی رکھنا ہے

    زخم اوروں کو کیوں دکھائیں سب

    لے چلوں آؤ تم کو منزل تک

    مجھ سے کہتی ہیں یہ دشائیں سب

    کام لوگوں کے دل کو بھا جائے

    دل اگر کام میں لگائیں سب

    مأخذ :
    • کتاب : Soch Samajh (Pg. 33)
    • Author : Salman Akhtar
    • مطبع : Star Publishers Pvt.Ltd, N. Delhi (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY