خمار موسم خوشبو حد چمن میں کھلا

محسن نقوی

خمار موسم خوشبو حد چمن میں کھلا

محسن نقوی

MORE BYمحسن نقوی

    خمار موسم خوشبو حد چمن میں کھلا

    مری غزل کا خزانہ ترے بدن میں کھلا

    تم اس کا حسن کبھی اس کی بزم میں دیکھو

    کہ ماہتاب سدا شب کے پیرہن میں کھلا

    عجب نشہ تھا مگر اس کی بخشش لب میں

    کہ یوں تو ہم سے بھی کیا کیا نہ وہ سخن میں کھلا

    نہ پوچھ پہلی ملاقات میں مزاج اس کا

    وہ رنگ رنگ میں سمٹا کرن کرن میں کھلا

    بدن کی چاپ نگہ کی زباں بھی ہوتی ہے

    یہ بھید ہم پہ مگر اس کی انجمن میں کھلا

    کہ جیسے ابر ہوا کی گرہ سے کھل جائے

    سفر کی شام مرا مہرباں تھکن میں کھلا

    کہوں میں کس سے نشانی تھی کس مسیحا کی

    وہ ایک زخم کہ محسنؔ مرے کفن میں کھلا

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-mohsin (Pg. 869)
    • Author : Mohsin Naqvi
    • مطبع : Mavra Publishers (2010)
    • اشاعت : 2010

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY