خوشی میں بھی نواسنج فغاں ہوں

غلام مولیٰ قلق

خوشی میں بھی نواسنج فغاں ہوں

غلام مولیٰ قلق

MORE BY غلام مولیٰ قلق

    خوشی میں بھی نواسنج فغاں ہوں

    زمین و آسماں کا طرز داں ہوں

    میں اپنی بے نشانی کا نشاں ہوں

    ہجوم ماتم عمر رواں ہوں

    ترے جاتے ہی میری زیست تہمت

    نہیں ملتا پتا اپنا کہاں ہوں

    غبار کاروان مور ہے زیست

    یہ خط یار سے آشفتہ جاں ہوں

    نہیں کچھ کام بخت و آسماں سے

    میں ناکامی میں اپنی کامراں ہوں

    نہیں دم مارنے کا دم اور اس پر

    سراپا شمع ساں شکل زباں ہوں

    خدا ہی گر نہ دے معشوق و مے کو

    تو کیوں پھر محتسب سے سرگراں ہوں

    وہاں کا رنگ پراں آسماں ہے

    میں جس عالم کی تصویر گماں ہوں

    کوئی آوارہ مل جائے تو پوچھوں

    کدھر سے آیا ہوں جاتا کہاں ہوں

    نکل جاتا ہے جی ہر آرزو پر

    پے خون جوانی میں جواں ہوں

    مرا غم عشرت رفتہ کا نغمہ

    کہ مثل گرد بوئے کارواں ہوں

    کواکب ہائے قسمت آسماں پر

    نہ ہوں کیوں نکتہ چیں میں نکتہ داں ہوں

    قلقؔ بے رونقی رونق ہے میری

    بہار عمر ہستی کی خزاں ہوں

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites