خوشی یاد آئی کہ غم یاد آئے

کنور مہیندر سنگھ بیدی سحر

خوشی یاد آئی کہ غم یاد آئے

کنور مہیندر سنگھ بیدی سحر

MORE BYکنور مہیندر سنگھ بیدی سحر

    خوشی یاد آئی کہ غم یاد آئے

    مگر تم ہمیں دم بہ دم یاد آئے

    جو تم یاد آئے تو غم یاد آئے

    جو غم یاد آئے تو ہم یاد آئے

    چھڑا ذکر جب ان کے جور و ستم کا

    مجھے ان کے لاکھوں کرم یاد آئے

    محبت میں اک وقت ایسا بھی گزرا

    نہ تم یاد آئے نہ ہم یاد آئے

    فلک پر جو دیکھے مہ و مہر و انجم

    ہمیں اپنے نقش قدم یاد آئے

    مقدر کو جب بھی سنوارا ہے ہم نے

    تری زلف کے پیچ و خم یاد آئے

    عجب کشمکش ہے کہ جینا نہ مرنا

    سحرؔ اس سے کہہ دو کہ کم یاد آئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY