خوش نما دھن پہ رقم درد کے نغمات سا تھا

ابھنندن پانڈے

خوش نما دھن پہ رقم درد کے نغمات سا تھا

ابھنندن پانڈے

MORE BY ابھنندن پانڈے

    خوش نما دھن پہ رقم درد کے نغمات سا تھا

    وقت رخصت بھی جنوں پہلی ملاقات سا تھا

    جسم کے دشت میں رقصاں تھے مہکتے ہوئے زخم

    کل شب ہجر کا عالم شب بارات سا تھا

    دل کے دریا میں تھرکتا تھا تری یاد کا چاند

    شب کے ہونٹوں پہ ترا ذکر مناجات سا تھا

    میں تو اک عمر فقط اس کے تعاقب میں رہا

    جو مری ذات میں موجود تری ذات سا تھا

    لمس آخر مرے کشکول بدن کی خاطر

    ایک مفلس کو میسر ہوئی خیرات سا تھا

    میں ترے شوخ لبوں پر تو ابھی آیا ہوں

    اس سے پہلے تری آنکھوں میں سوالات سا تھا

    جگمگاتے ہوئے جگنو نہ زیاں ہوتا چراغ

    رات میں کچھ بھی نہ تھا جس کو کہیں رات سا تھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY