خوب ہے شوق کا یہ پہلو بھی

جون ایلیا

خوب ہے شوق کا یہ پہلو بھی

جون ایلیا

MORE BYجون ایلیا

    خوب ہے شوق کا یہ پہلو بھی

    میں بھی برباد ہو گیا تو بھی

    حسن مغموم تمکنت میں تری

    فرق آیا نہ یک سر مو بھی

    یہ نہ سوچا تھا زیر سایۂ زلف

    کہ بچھڑ جائے گی یہ خوش بو بھی

    حسن کہتا تھا چھیڑنے والے

    چھیڑنا ہی تو بس نہیں چھو بھی

    ہائے وہ اس کا موج خیز بدن

    میں تو پیاسا رہا لب جو بھی

    یاد آتے ہیں معجزے اپنے

    اور اس کے بدن کا جادو بھی

    یاسمیں اس کی خاص محرم راز

    یاد آیا کرے گی اب تو بھی

    یاد سے اس کی ہے مرا پرہیز

    اے صبا اب نہ آئیو تو بھی

    ہیں یہی جونؔ ایلیا جو کبھی

    سخت مغرور بھی تھے بد خو بھی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    خوب ہے شوق کا یہ پہلو بھی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY