کس فکر کس خیال میں کھویا ہوا سا ہے

شہریار

کس فکر کس خیال میں کھویا ہوا سا ہے

شہریار

MORE BYشہریار

    کس فکر کس خیال میں کھویا ہوا سا ہے

    دل آج تیری یاد کو بھولا ہوا سا ہے

    گلشن میں اس طرح سے کب آئی تھی فصل گل

    ہر پھول اپنی شاخ سے ٹوٹا ہوا سا ہے

    چل چل کے تھک گیا ہے کہ منزل نہیں کوئی

    کیوں وقت ایک موڑ پہ ٹھہرا ہوا سا ہے

    کیا حادثہ ہوا ہے جہاں میں کہ آج پھر

    چہرہ ہر ایک شخص کا اترا ہوا سا ہے

    نذرانہ تیرے حسن کو کیا دیں کہ اپنے پاس

    لے دے کے ایک دل ہے سو ٹوٹا ہوا سا ہے

    پہلے تھے جو بھی آج مگر کاروبار عشق

    دنیا کے کاروبار سے ملتا ہوا سا ہے

    لگتا ہے اس کی باتوں سے یہ شہریارؔ بھی

    یاروں کے التفات کا مارا ہوا سا ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    کس فکر کس خیال میں کھویا ہوا سا ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY