کس کو بتاتے کس سے چھپاتے سراغ دل

سبیلہ انعام صدیقی

کس کو بتاتے کس سے چھپاتے سراغ دل

سبیلہ انعام صدیقی

MORE BYسبیلہ انعام صدیقی

    کس کو بتاتے کس سے چھپاتے سراغ دل

    چپ سادھ لی ہے زخم دکھایا نہ داغ دل

    کیسے کریں بیان غم جاں کی داستاں

    اے کاش گل کھلائے ہمارا یہ باغ دل

    گزرے ہماری زیست کے ایام اس طرح

    لبریز آنسوؤں سے ہے گویا ایاغ دل

    جب راکھ بن گئے تو کہا یہ حریف نے

    جل جل کے وہ جلاتے رہے ہیں چراغ دل

    جس سے ملے طویل زمانہ گزر گیا

    شاید اسی کے ذہن میں ہو کچھ سراغ دل

    چاہت کی اب تو کوئی بھی حسرت نہیں رہی

    سرسبز اس کی یاد سے پھر بھی ہے باغ دل

    رکھتی نہیں سبیلہؔ کبھی عیب پر نظر

    مصروف پیار میں رہا اس کا فراغ دل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY