کس لمحے ہم تیرا دھیان نہیں کرتے

عالم خورشید

کس لمحے ہم تیرا دھیان نہیں کرتے

عالم خورشید

MORE BYعالم خورشید

    کس لمحے ہم تیرا دھیان نہیں کرتے

    ہاں کوئی عہد و پیمان نہیں کرتے

    ہر دم تیری مالا جپتے ہیں لیکن

    گلیوں کوچوں میں اعلان نہیں کرتے

    اپنی کہانی دل میں چھپا کر رکھتے ہیں

    دنیا والوں کو حیران نہیں کرتے

    اک کمرے کو بند رکھا ہے برسوں سے

    وہاں کسی کو ہم مہمان نہیں کرتے

    اک جیسا دکھ مل کر بانٹا کرتے ہیں

    اک دوجے پر ہم احسان نہیں کرتے

    کچھ رستے مشکل ہی اچھے لگتے ہیں

    کچھ رستوں کو ہم آسان نہیں کرتے

    رستے میں جو ملتا ہے مل لیتے ہیں

    اچھے برے کی اب پہچان نہیں کرتے

    جی کرتا ہے بھالو بندر نام رکھیں

    کون سی وحشت ہم انسان نہیں کرتے

    عالمؔ اس کے پھول تو کب کے سوکھ گئے

    کیوں تازہ اپنا گلدان نہیں کرتے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY