کس پہ قربان کسے یاد ہوئے تھے ہم بھی

آر پی شوخ

کس پہ قربان کسے یاد ہوئے تھے ہم بھی

آر پی شوخ

MORE BYآر پی شوخ

    کس پہ قربان کسے یاد ہوئے تھے ہم بھی

    یاد اتنا ہے کہ برباد ہوئے تھے ہم بھی

    ان دنوں بھی تھے کہاں معنی و الفاظ بہم

    لب خاموش سے ارشاد ہوئے تھے ہم بھی

    اب تو دیوار پہ لکھے ہیں کئی نام نئے

    اس حسیں شہر کی روداد ہوئے تھے ہم بھی

    تھا وہاں پیڑ نہ پانی نہ پرندہ کوئی

    کس جلے دشت میں آباد ہوئے تھے ہم بھی

    ہم نہیں ایسے کہ اب جشن منائیں جھوٹے

    اول اول تو بہت شاد ہوئے تھے ہم بھی

    لے گئے سارے پر و بال اڑا کر کرگس

    یاد آتا ہے کہ آزاد ہوئے تھے ہم بھی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے