کس سے اب جا کے کہیں حال پریشاں اپنا

ابرار عابد

کس سے اب جا کے کہیں حال پریشاں اپنا

ابرار عابد

MORE BYابرار عابد

    کس سے اب جا کے کہیں حال پریشاں اپنا

    لیے پھرتے ہیں سبھی چاک گریباں اپنا

    جز ترے نام کے ابھری نہ کوئی اور صدا

    ہم نے چھیڑا جو کبھی تار رگ جاں اپنا

    پھر اسے مجھ سا کوئی چاہنے والا نہ ملا

    وہ پشیماں ہے بہت توڑ کے پیماں اپنا

    میرے ہونٹوں کے تبسم سے ہراساں ہو کر

    رخ بدل لیتا ہے سیل غم دوراں اپنا

    باغباں سے کبھی خیرات نہ مانگی ہم نے

    موسم گل میں بھی خالی رہا داماں اپنا

    کم سے کم جھوٹی تسلی سے تو محفوظ ہیں ہم

    یہ بھی اچھا ہے کہ کوئی نہیں پرساں اپنا

    اپنے قدموں پہ فرشتوں کو جھکا سکتا ہے

    مرتبہ جان لے عابدؔ اگر انساں اپنا

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY