کسی دل میں میرے لئے پیار کیوں ہو

نظیر صدیقی

کسی دل میں میرے لئے پیار کیوں ہو

نظیر صدیقی

MORE BYنظیر صدیقی

    کسی دل میں میرے لئے پیار کیوں ہو

    یہ ایثار ہے اور ایثار کیوں ہو

    تباہی ہو جب آرزو کا مقدر

    تو دل اس تباہی سے ہشیار کیوں ہو

    یہ خوددار ہونا ہی لایا خرابی

    محبت میں انسان خوددار کیوں ہو

    کوئی اپنے ہی غم سے خالی کہاں ہے

    جہاں میں کوئی میرا غم خوار کیوں ہو

    نہ پہلا سا ملنا نہ آنا نہ جانا

    اب اتنے بھی تم مجھ سے بیزار کیوں ہو

    اسی کشمکش نے ڈبویا جہاں کو

    انہیں جیت کیوں ہو مجھے ہار کیوں ہو

    جفا پر نہیں جب وہ دل ہی میں نادم

    نظر سے ندامت کا اظہار کیوں ہو

    اگر بخش دینے پہ تیار ہو تم

    مجھے جرم سے اپنے انکار کیوں ہو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY