کسی کے عشق کا یہ مستقل آزار کیا کہنا

واصف دہلوی

کسی کے عشق کا یہ مستقل آزار کیا کہنا

واصف دہلوی

MORE BYواصف دہلوی

    کسی کے عشق کا یہ مستقل آزار کیا کہنا

    مبارک ہو دل محزوں ترا ایثار کیا کہنا

    نہ کرتے التجا دیدار کی موسیٰ تو کیا کرتے

    چلا آتا ہے کب سے وعدۂ دیدار کیا کہنا

    وہی کرتا ہوں جو کچھ لکھ چکے میرے مقدر میں

    مگر پھر بھی ہوں اپنے فعل کا مختار کیا کہنا

    قدم اٹھتے ہی دل پر اک قیامت بیت جاتی ہے

    دم گلگشت اس کی شوخی رفتار کیا کہنا

    شب ہجراں پہ میری رشک آتا ہے ستاروں کو

    بھرم تجھ سے ہے میرا دیدۂ بیدار کیا کہنا

    ترے نغموں سے واصفؔ اہل دل مسرور ہوتے ہیں

    بایں افسردگی رنگینی گفتار کیا کہنا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    کسی کے عشق کا یہ مستقل آزار کیا کہنا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY