کسی کو ناز‌ خرد ہے کسی کو فخر جنوں

جمیل الدین عالی

کسی کو ناز‌ خرد ہے کسی کو فخر جنوں

جمیل الدین عالی

MORE BYجمیل الدین عالی

    کسی کو ناز‌ خرد ہے کسی کو فخر جنوں

    میں اپنے دل کا فسانہ کہوں تو کس سے کہوں

    نہ اضطراب میں لذت نہ آرزوئے سکوں

    کوئی کہے کہ میں اب کیا فریب کھا کے جیوں

    رہے گی پھر نہ یہ کیفیت طلب اے دل

    چھپے ہوئے ہیں تو ہے اشتیاق دید فزوں

    ہے آج دل پہ گماں حسن نا شناسی کا

    جلا چکے جب اسے جلو‌ ہائے گونا گوں

    ہو اب بھی فکر میں مشکل تو یاد آتے ہیں

    وہ ہر ادا میں تغزل کے سیکڑوں مضموں

    تم ایسے کون خدا ہو کہ عمر بھر تم سے

    امید بھی نہ رکھوں ناامید بھی نہ رہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY