کیا ہے تو نے تو جان جہاں جہاں تسخیر

مرزا اظفری

کیا ہے تو نے تو جان جہاں جہاں تسخیر

مرزا اظفری

MORE BYمرزا اظفری

    کیا ہے تو نے تو جان جہاں جہاں تسخیر

    ہوا ہے حسن کا شہرہ ترا تو عالم گیر

    نہا کے بال جو سرکائے گورے چہرہ سے

    تو جیسے چاند نکل آیا کالی بدری چیر

    نہ خوب رو تجھے کہہ سکتے ہیں نہ مہر نہ ماہ

    عجب گڑھی ید قدرت نے کچھ تری تصویر

    جہاں پڑا ترا سایہ اگا وہاں گل زار

    قدم دھرا ہے تو جس جا بنا ہے مشک و عبیر

    شکار کر لیا سارا جہاں شکار انداز

    ہوا ہے پار نگہ سے تری نگاہ کا تیر

    ہوے نہ ذبح نہ فتراک تک یہ جا پہنچے

    ادھر ادھر ہیں تڑپتے یہ نیم جاں نخچیر

    ہے اظفریؔ وہ سیہ بخت سانپ کاٹا بھی

    پڑی ہے زلف کی آ جس کے پاؤں میں زنجیر

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY