کوئی کیسا ہی ثابت ہو طبیعت آ ہی جاتی ہے

غلام مولیٰ قلق

کوئی کیسا ہی ثابت ہو طبیعت آ ہی جاتی ہے

غلام مولیٰ قلق

MORE BY غلام مولیٰ قلق

    کوئی کیسا ہی ثابت ہو طبیعت آ ہی جاتی ہے

    خدا جانے یہ کیا آفت ہے آفت آ ہی جاتی ہے

    وہ کیسے ہی چلیں تھم تھم قیامت آ ہی جاتی ہے

    بچے کوئی کسی ڈھب سے پہ شامت آ ہی جاتی ہے

    ستم کر کے ستم گر کی نظر نیچی ہی رہتی ہے

    برائی پھر برائی ہے ندامت آ ہی جاتی ہے

    زلیخا بے خرد آوارہ لیلیٰ بد مزہ شیریں

    سبھی مجبور ہیں دل سے محبت آ ہی جاتی ہے

    چراغ و شمع بزم یار کر کر غیر کو پھونکا

    دل افسردہ میں آخر حرارت آ ہی جاتی ہے

    ہوا نظروں ہی نظروں میں وہ محشر برق صد خرمن

    محبت کی نگاہوں سے شرارت آ ہی جاتی ہے

    پسینہ آ گیا ان کو کیا وعدہ جو آنے کا

    بری ہے ناز برداری نزاکت آ ہی جاتی ہے

    ہر اک سے اب وہ کہتے ہیں کہ لو ہم پر یہ مرتے ہیں

    جییں گے اس طرح کب تک کہ غیرت آ ہی جاتی ہے

    نہیں کچھ دل کا پھرنا عہد دشمن سے ترا پھرنا

    مگر کچھ سوچ کر آخر مروت آ ہی جاتی ہے

    نہ ہوتی گر نوید مرگ کیوں کر ہجر میں جیتے

    محبت میں بھی آسائش پہ نیت آ ہی جاتی ہے

    وصال غیر کے قصے کو سن کر کیا تڑپتا ہوں

    یہ ارماں کوئی جا سکتا ہے حسرت آ ہی جاتی ہے

    اگر صد سال کیجے شکر الفت کیجئے لیکن

    یہ وہ شیوہ ہے بد ظن پھر شکایت آ ہی جاتی ہے

    قلقؔ خط غیر کا کیوں کر نہ آتا کیوں نہ تم پڑھتے

    قضا لکھی ہوئی حضرت سلامت آ ہی جاتی ہے

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites