کچھ درد بڑھا ہے تو مداوا بھی ہوا ہے

شاہد ماہلی

کچھ درد بڑھا ہے تو مداوا بھی ہوا ہے

شاہد ماہلی

MORE BYشاہد ماہلی

    کچھ درد بڑھا ہے تو مداوا بھی ہوا ہے

    ہر سو دل بیتاب کا چرچا بھی ہوا ہے

    پرزے بھی اڑے ہیں مری وحشت کے سر راہ

    نظروں میں ہماری یہ تماشا بھی ہوا ہے

    پھوٹے ہیں کہیں آہ بھرے دل کے پھپھولے

    پامال کوئی شہر تمنا بھی ہوا ہے

    مانا کہ کڑی دھوپ میں سائے بھی ملے ہیں

    اس راہ میں ہر موڑ پر دھوکا بھی ہوا ہے

    روشن تو ہے یخ بستہ فضاؤں میں کوئی آگ

    تاریکیٔ زنداں میں اجالا بھی ہوا ہے

    ہر لمحہ کوئی حادثہ روکے ہے مرے پاؤں

    ہر پل کسی خواہش کا تقاضا بھی ہوا ہے

    کس موڑ پہ آ پہنچا ہے شاہدؔ یہ زمانہ

    رفتار قیامت کی ہے ٹھہرا بھی ہوا ہے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY