کچھ دن گزرے عالیؔ صاحب عالیؔ جی کہلاتے تھے

جمیل الدین عالی

کچھ دن گزرے عالیؔ صاحب عالیؔ جی کہلاتے تھے

جمیل الدین عالی

MORE BYجمیل الدین عالی

    کچھ دن گزرے عالیؔ صاحب عالیؔ جی کہلاتے تھے

    محفل محفل قریہ قریہ شعر سناتے جاتے تھے

    قدر سخن ہم کیا جانیں ہاں رنگ سخن کچھ ایسا تھا

    اچھے اچھے کہنے والے اپنے پاس بٹھاتے تھے

    غزلوں میں سو رنگ ملا کر اپنا رنگ ابھارا تھا

    استادوں کے سائے میں کچھ اپنی راہ بناتے تھے

    گیتوں میں کچھ اور نہ ہو اک کیفیت سی رہتی تھی

    جب بھی مصرعے رقصاں ہوتے معنی ساز بجاتے تھے

    دوہے کہنے اور پڑھنے کا ایسا طرز نکالا تھا

    سننے والے سر دھنتے تھے اور پہروں پڑھواتے تھے

    سامنے بیٹھی سندر ناریں آپ طلب بن جاتی تھیں

    پردوں میں سے فرمائش کے سو سو پرچے آتے تھے

    ''غزلیں دوہے گیت'' کی شہرت ملک سے باہر پھیلی تھی

    ہندوستاں سے آنے والے تحفوں میں لے جاتے تھے

    اہل ہنر کی خوشہ چینی ان کو وجہ سعادت تھی

    بے ہنروں میں اپنی انا کا پرچم بھی لہراتے تھے

    پھر دیکھا کہ بچہ بچہ ہنستا تھا اور عالیؔ جی

    فردیں لکھتے مسلیں پڑھتے بیٹھے گلڈ چلاتے تھے

    مآخذ :
    • کتاب : Range-e-Gazal (Pg. 175)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY