کچھ اس پہ سوچنا تھا مشورہ بھی کرنا تھا

یاسمین سحر

کچھ اس پہ سوچنا تھا مشورہ بھی کرنا تھا

یاسمین سحر

MORE BYیاسمین سحر

    کچھ اس پہ سوچنا تھا مشورہ بھی کرنا تھا

    معاملے پہ ابھی تبصرہ بھی کرنا تھا

    اسے بھی کہنا تھا اپنا خیال رکھنے کو

    بچھڑتے وقت مجھے حوصلہ بھی کرنا تھا

    کسی کے نام کے دن بھی بچا کے رکھنے تھے

    اور ایک زندگی سا سلسلہ بھی کرنا تھا

    وہ واقعات بھی دل سے مجھے بھلانے تھے

    کہیں کہیں پہ رقم سانحہ بھی کرنا تھا

    کہاں پہ آ کے کڑی سلسلے کی ٹوٹ گئی

    کسی سے میں نے کہیں رابطہ بھی کرنا تھا

    اسی مقام پہ عکس اپنے میں نے دفنائے

    جہاں پہ نسب مجھے آئینہ بھی کرنا تھا

    ابھی تو بات کا میں کر رہی تھی اندازہ

    پہنچ کے تہ میں مجھے فیصلہ بھی کرنا تھا

    نکل کے زندگی جیسی کڑی حقیقت سے

    مجھے تو تلخ سا اک تجربہ بھی کرنا تھا

    سنی ہیں اس کی ابھی تک شکایتیں میں نے

    بیان اپنا کوئی مسئلہ بھی کرنا تھا

    نکالنا تھی مجھے زندگی بھی مشکل سے

    مکمل اب کے کوئی دائرہ بھی کرنا تھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY