کچھ موج ہوا پیچاں اے میرؔ نظر آئی

میر تقی میر

کچھ موج ہوا پیچاں اے میرؔ نظر آئی

میر تقی میر

MORE BYمیر تقی میر

    کچھ موج ہوا پیچاں اے میرؔ نظر آئی

    شاید کہ بہار آئی زنجیر نظر آئی

    دلی کے نہ تھے کوچے اوراق مصور تھے

    جو شکل نظر آئی تصویر نظر آئی

    مغرور بہت تھے ہم آنسو کی سرایت پر

    سو صبح کے ہونے کو تاثیر نظر آئی

    گل بار کرے ہے گا اسباب سفر شاید

    غنچے کی طرح بلبل دلگیر نظر آئی

    اس کی تو دل آزاری بے ہیچ ہی تھی یارو

    کچھ تم کو ہماری بھی تقصیر نظر آئی

    RECITATIONS

    احمد محفوظ

    احمد محفوظ

    شمس الرحمن فاروقی

    شمس الرحمن فاروقی

    احمد محفوظ

    کچھ موج ہوا پیچاں اے میرؔ نظر آئی احمد محفوظ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY