aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

کچھ تو اس دشت گم آثار کی ویرانی سے

آصف بلال

کچھ تو اس دشت گم آثار کی ویرانی سے

آصف بلال

MORE BYآصف بلال

    کچھ تو اس دشت گم آثار کی ویرانی سے

    کچھ تو مر جائیں گے ہم اپنی پریشانی سے

    ایک خیمے کی طنابیں کٹیں وحشت کے سبب

    ایک خنجر کی بجھی پیاس خوں افشانی سے

    اک فقیر آج بھی گردن کو اٹھاتا ہی نہیں

    جھک گئی تھی کسی ہجرت پہ پشیمانی سے

    میں کہ بچھڑا تھا کسی شخص سے برسوں پہلے

    تب سے سہما ہوں میں قدرت کی نگہبانی سے

    اب جو اس شہر میں آئے تو مقدر جانو

    ہم میسر کہاں آتے ہیں یوں آسانی سے

    ہم حسینی ہیں ہمیں پیاس کی شدت کیسی

    سرخ رو آج بھی ویسے ہے لہو پانی سے

    آ ہی جائیں گے اداکاری کے کچھ ڈھب آصفؔ

    کون بچ سکتا ہے اس عالم انسانی سے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے