کچھ تو تنہائی کی راتوں میں سہارا ہوتا

اختر شیرانی

کچھ تو تنہائی کی راتوں میں سہارا ہوتا

اختر شیرانی

MORE BY اختر شیرانی

    کچھ تو تنہائی کی راتوں میں سہارا ہوتا

    تم نہ ہوتے نہ سہی ذکر تمہارا ہوتا

    ترک دنیا کا یہ دعویٰ ہے فضول اے زاہد

    بار ہستی تو ذرا سر سے اتارا ہوتا

    وہ اگر آ نہ سکے موت ہی آئی ہوتی

    ہجر میں کوئی تو غمخوار ہمارا ہوتا

    زندگی کتنی مسرت سے گزرتی یا رب

    عیش کی طرح اگر غم بھی گوارا ہوتا

    عظمت گریہ کو کوتاہ نظر کیا سمجھیں

    اشک اگر اشک نہ ہوتا تو ستارا ہوتا

    لب زاہد پہ ہے افسانۂ حور جنت

    کاش اس وقت مرا انجمن آرا ہوتا

    غم الفت جو نہ ملتا غم ہستی ملتا

    کسی صورت تو زمانے میں گزارا ہوتا

    کس کو فرصت تھی زمانے کے ستم سہنے کی

    گر نہ اس شوخ کی آنکھوں کا اشارا ہوتا

    کوئی ہمدرد زمانے میں نہ پایا اخترؔ

    دل کو حسرت ہی رہی کوئی ہمارا ہوتا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    اقبال بانو

    اقبال بانو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY