کیا خبر کہہ دیا کیا آپ نے دیوانے سے

مرزا قادر بخش صابر دہلوی

کیا خبر کہہ دیا کیا آپ نے دیوانے سے

مرزا قادر بخش صابر دہلوی

MORE BYمرزا قادر بخش صابر دہلوی

    کیا خبر کہہ دیا کیا آپ نے دیوانے سے

    اب دل وحشی بہلتا نہیں بہلانے سے

    جس کو کچھ ربط ہے ساقی ترے میخانے سے

    اس کو مطلب ہے نہ شیشے سے نہ پیمانے سے

    ہم کو تھا چین میسر اسی دیوانے سے

    مٹ گئے ہم بھی دل زار کے مٹ جانے سے

    زندگی ملتی ہے جس شخص کو مر جانے سے

    وہ سمجھ سکتا ہے ناصح ترے سمجھانے سے

    کس قدر رنج و مصیبت کا مرقع ہوں میں

    کانپ اٹھتا ہے مرا دل تری یاد آنے سے

    یہ نصیحت تو بجا ناصح مشفق لیکن

    کوئی دیوانہ سمجھتا بھی ہے سمجھانے سے

    سامنے آؤ ہٹا دو رخ زیبا سے نقاب

    کوئی پردہ بھی کیا کرتا ہے دیوانے سے

    ہم نے یہ کہہ کے دل زار کو سمجھایا ہے

    کام بنتے ہیں کہیں عشق میں گھبرانے سے

    میری جمعیت خاطر کو پریشاں نہ کرو

    زلف برہم کو ہٹاؤ نہ ابھی شانے سے

    آپ کے ظلم کو بھی میں نے کرم سمجھا ہے

    شرم آتی ہے مجھے آپ کے شرمانے سے

    کیا خبر عشق میں انجام مرا کیا ہوگا

    اب یگانے بھی نظر آتے ہیں بیگانے سے

    دل دکھانے کا تو انجام برا ہوتا ہے

    خود تڑپ جائے گا ظالم مرے تڑپانے سے

    اللہ اللہ یہ بیمار محبت کا علاج

    رنگ بدلا ترے دامن کی ہوا کھانے سے

    جاتے جاتے مری کیفیت دل دیکھتا جا

    مجھ پہ کیا گزرے گی اے دوست ترے جانے سے

    کیا کریں جی کے یہ جینا بھی کوئی جینا ہے

    جب حیات ابدی ملتی ہے مر جانے سے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے