کیا ملا قیس کو گرد رہ صحرا ہو کر

زیبا

کیا ملا قیس کو گرد رہ صحرا ہو کر

زیبا

MORE BYزیبا

    کیا ملا قیس کو گرد رہ صحرا ہو کر

    رہ گیا ہوتا غبار در لیلیٰ ہو کر

    یاد آتے ہیں چمن میں جو کسی کے عارض

    گل کھٹکتے ہیں مری آنکھوں میں کانٹا ہو کر

    پہلے کیا تھا جو کیا کرتے تھے تعریف مری

    اب ہوا کیا جو برا ہو گیا اچھا ہو کر

    دل میں رکھ گرد کدورت نہ بہت اے کم بیں

    کہیں رہ جائے نہ یہ آئنہ اندھا ہو کر

    ہجر میں یاد مژہ اور بھی تڑپاتی ہے

    قلب بسمل میں کھٹکتی ہے یہ کانٹا ہو کر

    نالۂ گرم نے تاثیر عجب دکھلائی

    رہ گیا مثل چراغ آپ میں ٹھنڈا ہو کر

    یار کے رخ کی صباحت کا تصور شب ہجر

    آیا تسکیں کو مری نور کا تڑکا ہو کر

    دل سے کہتا ہے غم الفت جاناں دم مرگ

    تم تو دنیا سے چلے میں رہوں کس کا ہو کر

    چھوڑنا اے غم الفت نہ کبھی ساتھ اس کا

    کہیں گھبرائے مرا دل نہ اکیلا ہو کر

    آئے تو وصل کا دن ہو تو کہیں بوس و کنار

    سب نکل جائے گی شرم ان کی پسینا ہو کر

    جسم انور کی لطافت کی ثنا کیا کیجے

    جامۂ یار نہ اترا کبھی میلا ہو کر

    دہر کی دیکھتے ہیں پست و بلند اے زیباؔ

    کربلا جائیں گے اس واسطے بطحا ہو کر

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY