کیا قیامت ہے کہ اک شخص کا ہو بھی نہ سکوں

شاذ تمکنت

کیا قیامت ہے کہ اک شخص کا ہو بھی نہ سکوں

شاذ تمکنت

MORE BYشاذ تمکنت

    کیا قیامت ہے کہ اک شخص کا ہو بھی نہ سکوں

    زندگی کون سی دولت ہے کہ کھو بھی نہ سکوں

    گھر سے نکلوں تو بھرے شہر کے ہنگامے ہیں

    میں وہ مجبور تری یاد میں رو بھی نہ سکوں

    دن کے پہلو سے لگا رہتا ہے اندیشۂ شام

    صبح کے خوف سے نیند آئے تو سو بھی نہ سکوں

    ختم ہوتا ہی نہیں سلسلۂ موج سراب

    پار اتر بھی نہ سکوں ناؤ ڈبو بھی نہ سکوں

    شاذؔ معلوم ہوا عجز بیانی کیا ہے

    دل میں وہ آگ ہے لفظوں میں سمو بھی نہ سکوں

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e- Shaz Tamkanat (Pg. 305)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY