کیوں بہار آتے ہی پہلو میں بجھا آپ ہی آپ

مرلی دھر شاد

کیوں بہار آتے ہی پہلو میں بجھا آپ ہی آپ

مرلی دھر شاد

MORE BY مرلی دھر شاد

    کیوں بہار آتے ہی پہلو میں بجھا آپ ہی آپ

    یا الٰہی مرے دل کو ہوا کیا آپ ہی آپ

    خط میں لکھا ہوا آئے گا جدائی کا پیام

    خواب میں خط کے ہوئے حرف جدا آپ ہی آپ

    نبضیں ڈوبی ہوئی بیمار کی پائیں شاید

    ہاتھ مل کر کوئی بالیں سے اٹھا آپ ہی آپ

    نہ طلب تھی مرے دل کی نہ اشارہ ان کا

    جام لینے کو مرا ہاتھ بڑھا آپ ہی آپ

    عشق صادق کا کہیں ذکر ہوا تھا شاید

    اس نے محفل میں مرا نام لیا آپ ہی آپ

    شمع محفل تمہیں کہتا تھا زمانہ دیکھا

    ہوا پروانہ اڑ کے فدا آپ ہی آپ

    جذب دل کا یہ اثر بزم عدو میں بھی ہوا

    کسمساتے ہوئے کچھ اس نے کہا آپ ہی آپ

    شوخیٔ حسن جگر سوز کا ایما یہ نہ تھا

    بگڑی ہے شمع کی محفل میں ہوا آپ ہی آپ

    تم نے دشمن سے کہیں آنکھ لڑائی ہوگی

    کیوں ہوا تیر نظر آج خطا آپ ہی آپ

    شادؔ نے آج یہ مقتل میں تماشا دیکھا

    دست قاتل سے لگی اڑنے حنا آپ ہی آپ

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY