کیوں جوئے رواں آ کے یوں آنکھوں میں کھڑی ہے

آر پی شوخ

کیوں جوئے رواں آ کے یوں آنکھوں میں کھڑی ہے

آر پی شوخ

MORE BYآر پی شوخ

    کیوں جوئے رواں آ کے یوں آنکھوں میں کھڑی ہے

    لگتا ہے پہاڑوں پہ کہیں برف پڑی ہے

    اے درد کبھی اٹھ بھی سہی تنگئ دل سے

    مدت سے در دل پہ کوئی یاد کھڑی ہے

    منزل کو چلے یا کسی مقتل کو چلے ہیں

    ہر راہ یوں لگتی ہے کہ زنجیر پڑی ہے

    یوں ہی تو نہیں بیٹھ گئے جھاڑ کے دامن

    محرومیٔ تقدیر سے امید بڑی ہے

    دو دن کی محبت نے دی یہ ہستیٔ جاوید

    اک پل بھی نہیں کٹتی ابھی عمر پڑی ہے

    یوں ہم نے نکالی ہے تری راہ ملاقات

    یوں ہجر ترے دید کی برکت کی گھڑی ہے

    ہر صبح تری چشم فسوں ساز کا غمزہ

    ہر شام ترے لب سے ہنسی پھوٹ پڑی ہے

    دن ہے تو ہے مہکا ترے رخسار کا غازہ

    شب ہے تو تری مانگ ستاروں سے جڑی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے