کیونکہ ہم دنیا میں آئے کچھ سبب کھلتا نہیں

بہادر شاہ ظفر

کیونکہ ہم دنیا میں آئے کچھ سبب کھلتا نہیں

بہادر شاہ ظفر

MORE BYبہادر شاہ ظفر

    کیونکہ ہم دنیا میں آئے کچھ سبب کھلتا نہیں

    اک سبب کیا بھید واں کا سب کا سب کھلتا نہیں

    پوچھتا ہے حال بھی گر وہ تو مارے شرم کے

    غنچۂ تصویر کے مانند لب کھلتا نہیں

    شاہد مقصود تک پہنچیں گے کیونکر دیکھیے

    بند ہے باب تمنا ہے غضب کھلتا نہیں

    بند ہے جس خانۂ زنداں میں دیوانہ تیرا

    اس کا دروازہ پری رو روز و شب کھلتا نہیں

    دل ہے یہ غنچہ نہیں ہے اس کا عقدہ اے صبا

    کھولنے کا جب تلک آوے نہ ڈھب کھلتا نہیں

    عشق نے جن کو کیا خاطر گرفتہ ان کا دل

    لاکھ ہووے گرچہ سامان طرب کھلتا نہیں

    کس طرح معلوم ہووے اس کے دل کا مدعا

    مجھ سے باتوں میں ظفرؔ وہ غنچہ لب کھلتا نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY