لاکھ ناداں ہیں مگر اتنی سزا بھی نہ ملے

وارث کرمانی

لاکھ ناداں ہیں مگر اتنی سزا بھی نہ ملے

وارث کرمانی

MORE BYوارث کرمانی

    لاکھ ناداں ہیں مگر اتنی سزا بھی نہ ملے

    چارہ سازوں کو مری شام بلا بھی نہ ملے

    حسرت آگیں تو ہے ناکامیٔ منزل لیکن

    لطف تو جب ہے کہ خود اپنا پتا بھی نہ ملے

    کچھ نگاہوں سے غم دل کی خبر ملتی ہے

    ورنہ ہم وہ ہیں کہ باتوں سے ہوا بھی نہ ملے

    خواہش داد رسی کیا ہو ستمگر سے جہاں

    آنکھ میں شائبۂ عذر جفا بھی نہ ملے

    اس قدر قحط بصیرت بھی نہیں اے واعظ

    ہم بتوں کے لیے نکلیں تو خدا بھی نہ ملے

    عشق وہ عرصۂ پر خار ہے ہمدم کہ جہاں

    زندگی راس نہ آئے تو قضا بھی نہ ملے

    کیا قیامت ہے طبیعت کی روانی وارثؔ

    کوئی ڈھونڈھے تو نشان کف پا بھی نہ ملے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY