لاکھ پردوں میں گو نہاں ہم تھے

آتش بہاولپوری

لاکھ پردوں میں گو نہاں ہم تھے

آتش بہاولپوری

MORE BYآتش بہاولپوری

    لاکھ پردوں میں گو نہاں ہم تھے

    پھر بھی ہر چیز سے عیاں ہم تھے

    ایک عالم کے ترجماں ہم تھے

    ان کے آگے ہی بے زباں ہم تھے

    ہم ہی ہم تھے وہاں جہاں ہم تھے

    آپ آئے تو پھر کہاں ہم تھے

    ہر رگ و پے میں برق رقصاں تھی

    ہائے وہ وقت جب جواں ہم تھے

    آج تو خیر سے ہیں عرش مقام

    کل زمیں پر بھی آسماں ہم تھے

    غم کے ماروں کو ناز تھا ہم پر

    جذبۂ غم کے ترجماں ہم تھے

    ہر قدم پہ تھی سامنے منزل

    سوئے منزل رواں دواں ہم تھے

    زندگی بھر جو لب پہ آ نہ سکی

    درد و غم کی وہ داستاں ہم تھے

    دوستوں کا تو ذکر کیا آتشؔ

    دشمنوں پر بھی مہرباں ہم تھے

    مأخذ :
    • کتاب : Jada-e-manzil (Pg. 39)
    • Author : Atish Bahawalpuri
    • مطبع : Nirali Duniya Publications (2001)
    • اشاعت : 2001

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY