لفظوں کی تصویر بناتی دل میں قید ہوئی

جینت پرمار

لفظوں کی تصویر بناتی دل میں قید ہوئی

جینت پرمار

MORE BYجینت پرمار

    لفظوں کی تصویر بناتی دل میں قید ہوئی

    ایک سمے وہ اچھی لڑکی دل میں قید ہوئی

    کورے کاغذ پر کھینچی تھی میں نے اک تصویر

    جنگل جنگل اڑتی تتلی دل میں قید ہوئی

    اس کے بعد وہی تصویریں سب کو دکھاتا ہوں

    خوابوں کی وہ دنیا ساری دل میں قید ہوئی

    دل کو دکھاتی ہے پھر بھی کیوں اچھی لگتی ہے

    یادوں کی یہ شام سہانی دل میں قید ہوئی

    کون سا تارا اس کا گھر ہے سوچ رہا تھا میں

    رات پری آنگن میں اتری دل میں قید ہوئی

    آوارہ بادل تھے ہم بھی کیا کرتے آخر

    ایک کرن گھر میں لے آئی دل میں قید ہوئی

    RECITATIONS

    جینت پرمار

    جینت پرمار,

    جینت پرمار

    لفظوں کی تصویر بناتی دل میں قید ہوئی جینت پرمار

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے