لہو کی آنچ جیسا ہو رہا ہے

نبیل احمد نبیل

لہو کی آنچ جیسا ہو رہا ہے

نبیل احمد نبیل

MORE BYنبیل احمد نبیل

    لہو کی آنچ جیسا ہو رہا ہے

    تمہارا غم ستارہ ہو رہا ہے

    یہ کون آیا ہے بام آرزو پر

    فضاؤں میں اجالا ہو رہا ہے

    جھڑی ہے دھول کس کے نقش پا سے

    بہت آسان رستہ ہو رہا ہے

    سکڑتی جا رہی ہے مجھ پہ دھرتی

    بدن میرا کشادہ ہو رہا ہے

    مری پلکوں پہ اک موہوم آنسو

    کہ شبنم سے شرارہ ہو رہا ہے

    سمجھتی ہے یہی دنیا کہ مجھ کو

    محبت میں خسارہ ہو رہا ہے

    عصا جب سے نبیلؔ آیا میسر

    سمندر بھی کنارا ہو رہا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY