لپٹتی ہے بہت یاد وطن جب دامن دل سے

یگانہ چنگیزی

لپٹتی ہے بہت یاد وطن جب دامن دل سے

یگانہ چنگیزی

MORE BYیگانہ چنگیزی

    دلچسپ معلومات

    نشر کی غزل : 35 کے یہ نو شعر(1914ء)

    لپٹتی ہے بہت یاد وطن جب دامن دل سے

    پلٹ کر اک سلام شوق کر لیتا ہوں منزل سے

    نظر آئے جب آثار جدائی رنگ محفل سے

    نگاہ یاسؔ بیگانہ ہوئی یاران یک دل سے

    ابھرنے کے نہیں بحر فنا میں ڈوبنے والے

    در مقصود ہی غم ہے تو پھر کیا کام ساحل سے

    تصور لالہ و گل کا خزاں میں بھی نہیں مٹتا

    نگاہ شوق وابستہ ہے اب تک نقش باطل سے

    نہیں معلوم کیا لذت اٹھائی ہے اسیری میں

    دل وحشی پھڑک اٹھتا ہے آواز سلاسل سے

    کسی شے میں نہ ہوگی بادۂ عرفاں کی گنجائش

    لڑا لے ساغر جم کو بھی کوئی شیشۂ دل سے

    تصور نے دکھایا شاہد مقصود کا جلوہ

    اتر آئی ہے لیلیٰ سر زمین دل پہ محمل سے

    رہے گی چار دیوار عناصر درمیاں کب تک

    اٹھے گا زلزلہ اک دن اسی بیٹھے ہوئے دل سے

    کہاں تک پردۂ فانوس سے سر کی بلا ٹلتی

    ازل سے لاگ تھی باد فنا کو شمع محفل سے

    یہیں سے سیر کر لو یاسؔ اتنی دور کیوں جاؤ

    عدم آباد کر ڈانڈا ملا ہے کوئے قاتل سے

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Yagana (Pg. 286)
    • Author : Meerza Yagana Changezi Lukhnawi
    • مطبع : Farib Book Depot (P) Ltd. (2005)
    • اشاعت : 2005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے