لٹا دئیے تھے کبھی جو خزانے ڈھونڈھتے ہیں

منظور ہاشمی

لٹا دئیے تھے کبھی جو خزانے ڈھونڈھتے ہیں

منظور ہاشمی

MORE BYمنظور ہاشمی

    لٹا دئیے تھے کبھی جو خزانے ڈھونڈھتے ہیں

    نئے زمانے میں کچھ دن پرانے ڈھونڈھتے ہیں

    کبھی کبھی تو یہ لگتا ہے میں وہ لمحہ ہوں

    کہ اک زمانے سے جس کو زمانے ڈھونڈھتے ہیں

    کچھ احتیاط بھی اب کے طلب میں رکھنا پڑی

    سو اس کو اور کسی کے بہانے ڈھونڈھتے ہیں

    لپک کے آتے ہیں سینے کی سمت تیر ایسے

    پرند شاخ پہ جیسے ٹھکانے ڈھونڈھتے ہیں

    ہماری سادہ مزاجی بھی کیا قیامت ہے

    کہ اب قفس ہی میں ہم آشیانے ڈھونڈھتے ہیں

    مأخذ :
    • کتاب : Sukhan Aabaad (Pg. 89)
    • Author : Manzoor Hashmi
    • مطبع : Manzoor Hashmi (2005)
    • اشاعت : 2005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY