لطف یہ ہے جسے آشوب جہاں کہتا ہوں

غلام ربانی تاباں

لطف یہ ہے جسے آشوب جہاں کہتا ہوں

غلام ربانی تاباں

MORE BYغلام ربانی تاباں

    لطف یہ ہے جسے آشوب جہاں کہتا ہوں

    اسی ظالم کو فروغ دل و جاں کہتا ہوں

    غیر کا ذکر ہی کیا مفت میں الزام نہ دو

    دل کی ہر بات میں تم سے بھی کہاں کہتا ہوں

    کسی مجبور کے ہونٹوں پہ جو آ جاتا ہے

    اس تبسم کو میں اعجاز فغاں کہتا ہوں

    نہ میں زندانی‌ٔ صحرا نہ اسیر گلشن

    کوئی بندش ہو اسے جی کا زیاں کہتا ہوں

    دل شکستہ سہی مایوس نہیں ہوں اے دوست

    میں کہ ہر دور کو دور گزراں کہتا ہوں

    حسن کا شیوۂ پیماں شکنی اچھا ہے

    پھر بھی ہر سانس کو چشم نگراں کہتا ہوں

    کوئی حد ہے مری آشفتہ سری کی تاباںؔ

    ان کی زلفوں کو چراغوں کا دھواں کہتا ہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY