aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

مانع دشت نوردی کوئی تدبیر نہیں

مرزا غالب

مانع دشت نوردی کوئی تدبیر نہیں

مرزا غالب

MORE BYمرزا غالب

    مانع دشت نوردی کوئی تدبیر نہیں

    ایک چکر ہے مرے پانو میں زنجیر نہیں

    شوق اس دشت میں دوڑائے ہے مجھ کو کہ جہاں

    جادہ غیر از نگہ دیدۂ تصویر نہیں

    حسرت لذت آزار رہی جاتی ہے

    جادۂ راہ وفا جز دم شمشیر نہیں

    رنج نومیدی جاوید گوارا رہیو

    خوش ہوں گر نالہ زبونی کش تاثیر نہیں

    سر کھجاتا ہے جہاں زخم سر اچھا ہو جائے

    لذت سنگ بہ اندازۂ تقریر نہیں

    جب کرم رخصت بیباکی و گستاخی دے

    کوئی تقصیر بجز خجلت تقصیر نہیں

    غالبؔ اپنا یہ عقیدہ ہے بقول ناسخؔ

    آپ بے بہرہ ہے جو معتقد میرؔ نہیں

    میرؔ کے شعر کا احوال کہوں کیا غالبؔ

    جس کا دیوان کم از گلشن کشمیر نہیں

    آئینہ دام کو پردے میں چھپاتا ہے عبث

    کہ پری زاد نظر قابل تسخیر نہیں

    مثل گل زخم ہے میرا بھی سناں سے توام

    تیرا ترکش ہی کچھ آبستنیٔ تیر نہیں

    مأخذ:

    دیوان غالب جدید (Pg. 258)

    • مصنف: مرزا غالب
      • ناشر: مدھیہ پردیش اردو اکیڈمی، بھوپال
      • سن اشاعت: 1982

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے