مہکے ہوئے گلوں کا چمن بولنے لگا

اسرار اکبر آبادی

مہکے ہوئے گلوں کا چمن بولنے لگا

اسرار اکبر آبادی

MORE BYاسرار اکبر آبادی

    مہکے ہوئے گلوں کا چمن بولنے لگا

    وہ چپ ہوا تو اس کا بدن بولنے لگا

    آنچل ہے کہکشاں تو وہ خود بھی ہے چاند سا

    باہوں میں میری آ کے گگن بولنے لگا

    تابانیوں میں اس کی ہے موج وفا کی گونج

    دن چپ ہوا تو دل کا رتن بولنے لگا

    بولی گئی تھی درد کے موسم میں جو کبھی

    پھر وہ زبان اپنا وطن بولنے لگا

    خاموش رہ کے اس نے گزاری تھی زندگی

    وہ شخص جب مرا تو کفن بولنے لگا

    دل کی حویلیوں کے ہوئے آئنے خموش

    شہر انا میں سنگ کہن بولنے لگا

    آہن کے شور و شر میں ہے اسرارؔ وہ اثر

    لہجے میں دھن کے آج کا فن بولنے لگا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے