محسوس ہو رہا ہے کہ دنیا سمٹ گئی

نور جہاں ثروت

محسوس ہو رہا ہے کہ دنیا سمٹ گئی

نور جہاں ثروت

MORE BYنور جہاں ثروت

    محسوس ہو رہا ہے کہ دنیا سمٹ گئی

    میری پسند کتنے ہی خانوں میں بٹ گئی

    تنہائیوں کی برف پگھلتی نہیں ہنوز

    وعدوں کے اعتبار کی بھی دھوپ چھٹ گئی

    ہم نے وفا نبھائی بڑی تمکنت کے ساتھ

    اپنے ہی دم پہ زندہ رہے عمر کٹ گئی

    دور خرد وہ دور خرد ہے کہ کیا کہیں

    قیمت بڑھی ہے فن کی مگر قدر گھٹ گئی

    ثروتؔ ہر ایک رت میں لپیٹے رہی جسے

    وہ نامراد آس کی چادر بھی پھٹ گئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY