میں نے کہا کہ دعوی‌ٔ الفت مگر غلط

سید یوسف علی خاں ناظم

میں نے کہا کہ دعوی‌ٔ الفت مگر غلط

سید یوسف علی خاں ناظم

MORE BYسید یوسف علی خاں ناظم

    میں نے کہا کہ دعوی‌ٔ الفت مگر غلط

    کہنے لگے کہ ہاں غلط اور کس قدر غلط

    تاثیر آہ و زاریٔ شب ہائے تار جھوٹ

    آوازۂ قبول دعائے سحر غلط

    سوز جگر سے ہونٹ پہ تبخالہ‌ افترا

    شور فغاں سے جنبش دیوار و در غلط

    ہاں سینے سے نمائش داغ دروں دروغ

    ہاں آنکھ سے تراوش خون جگر غلط

    آ جائے کوئی دم میں تو کیا کچھ نہ کیجئے

    عشق مجاز و چشم حقیقت نگر غلط

    بوس و کنار کے لئے یہ سب فریب ہیں

    اظہار پاک‌ بازی و ذوق نظر غلط

    لو صاحب آفتاب کہاں اور ہم کہاں

    احمق بنیں ہم اس کو نہ سمجھیں اگر غلط

    سینے میں اپنے جانتے ہو تم کہ دل نہیں

    ہم کو سمجھتے ہو کہ ہے ان کی کمر غلط

    کہنا ادا کو تیغ خوشامد کی بات ہے

    سینے کو اپنی اس کی سمجھنا سپر غلط

    مٹی میں کیا دھری تھی کہ چپکے سے سونپ دی

    جان عزیز پیشکش نامہ بر غلط

    پوچھو تو کوئی مر کے بھی کرتا ہے کچھ کلام

    کہتے ہو جان دی ہے سر رہ گزر غلط

    ہم پوچھتے پھریں کہ جنازہ کدھر گیا

    مرنے کی اپنی روز اڑانی خبر غلط

    آیت نہیں حدیث نہیں جس کو مانئے

    ہے نظم و نثر اہل سخن سربسر غلط

    یہ کچھ سنا جواب میں ناظمؔ ستم کیا

    کیوں یہ کہا کہ دعویٔ الفت مگر غلط

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY