میں شکل دیکھ کے کیسے کہوں کہ کیا ہوگا

خان جانباز

میں شکل دیکھ کے کیسے کہوں کہ کیا ہوگا

خان جانباز

MORE BYخان جانباز

    میں شکل دیکھ کے کیسے کہوں کہ کیا ہوگا

    حسین شخص ہے ممکن ہے بے وفا ہوگا

    تمہیں خیال بھی آیا سفر پہ جاتے ہوئے

    تمہارے بعد ہمارا یہاں پہ کیا ہوگا

    میں جھوٹ بول کے آیا تھا واپسی کا جسے

    وہ شخص اب بھی مری راہ دیکھتا ہوگا

    یہ دوستی نہ کہیں پیار میں بدل جائے

    اب اپنے درمیاں تھوڑا سا فاصلہ ہوگا

    یہ راز مجھ پہ کھلا اب کہ میرا کوئی نہیں

    میں سوچتا تھا مرے ساتھ بھی خدا ہوگا

    یہ شاعری کا تو خود شوق تھا اسے جانبازؔ

    ہاں شاعروں سے کوئی مسئلہ رہا ہوگا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY