مکیں ہوں اور حدود مکاں نہیں معلوم

جمیل الدین عالی

مکیں ہوں اور حدود مکاں نہیں معلوم

جمیل الدین عالی

MORE BYجمیل الدین عالی

    مکیں ہوں اور حدود مکاں نہیں معلوم

    سنانے بیٹھ گیا داستاں نہیں معلوم

    دل حزیں کو کرم کی امید کرنے دے

    ابھی اسے تری مجبوریاں نہیں معلوم

    گزر رہی ہے بس اک سوز و کرب پیہم میں

    کہاں جلا تھا مرا آشیاں نہیں معلوم

    سکوں سے منتظر امتیاز ہے اب تک

    مری جبیں کو ترا آستاں نہیں معلوم

    کسی کو ان کا پتہ کیا بتائیں اے عالیؔ

    ہمیں تو آپ ہی اپنا نشاں نہیں معلوم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY