منظر وقت کی یکسانی میں بیٹھا ہوا ہوں

اعجاز گل

منظر وقت کی یکسانی میں بیٹھا ہوا ہوں

اعجاز گل

MORE BYاعجاز گل

    منظر وقت کی یکسانی میں بیٹھا ہوا ہوں

    رات دن ایک سی ویرانی میں بیٹھا ہوا ہوں

    کوئی سامان سفر ہے نہ مسافت در پیش

    مطمئن بے سر و سامانی میں بیٹھا ہوا ہوں

    کبھی نایافت کا ہے تو کبھی کم یافت کا غم

    وجہ بے وجہ پریشانی میں بیٹھا ہوا ہوں

    کار دشوار ہے آغاز سے منکر جب تک

    کار بے کار کی آسانی میں بیٹھا ہوا ہوں

    کل کہیں رفتہ میں تھا حال کی حیرت کا اسیر

    اب کسی فردا کی حیرانی میں بیٹھا ہوا ہوں

    خیر ہم زاد مرا دور تماشائی ہے

    شر ہوں اور فطرت انسانی میں بیٹھا ہوا ہوں

    جسم ہوں اور نفس ٹھہرا ہے ضامن میرا

    ساعت عمر کی نگرانی میں بیٹھا ہوا ہوں

    ایک بازار طلسمات ہے جس کے اندر

    جیب خالی تری ارزانی میں بیٹھا ہوا ہوں

    ریگ تا ریگ ہوں پھیلا ہوا صحرا کی طرح

    اور سرابوں کی فراوانی میں بیٹھا ہوا ہوں

    ایسا سناٹا ہے آواز سے ہول آتا ہے

    اک بیاباں سا بیابانی میں بیٹھا ہوا ہوں

    نہ میں بلقیس کہ ہو شہر سبا کی خواہش

    نہ غم تخت سلیمانی میں بیٹھا ہوا ہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY