مرکز حرف تکلم تھا بیاں تک نہ ہوا

قمر عباس قمر

مرکز حرف تکلم تھا بیاں تک نہ ہوا

قمر عباس قمر

MORE BYقمر عباس قمر

    مرکز حرف تکلم تھا بیاں تک نہ ہوا

    اک ترا ذکر تھا جو میری زباں تک نہ ہوا

    شوق پرواز میں پر ٹوٹ گئے طائر کے

    وہ یقیں تھا کہ مرے دل کو گماں تک نہ ہوا

    کیا عجب طرفہ تماشا ہے تری بستی میں

    میں نے اک عمر گزاری ہے مکاں تک نہ ہوا

    جس کے ہونے پہ نہ ہونے کا گماں ہوتا ہے

    وہی گلدستۂ جاں صرف خزاں تک نہ ہوا

    میں نے دنیا تری تخلیق پہ سوچا تھا بہت

    راز گم گشتہ‌ٔ محبوب عیاں تک نہ ہوا

    بس کہ اب ختم ہوا سلسلۂ سوز و گداز

    دل مرا جل بھی گیا اور دھواں تک نہ ہوا

    زندگی حرف فنا کے لیے تحریک قمرؔ

    روح باقی رہی اور کوئی زیاں تک نہ ہوا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY